شام میں داعش کے آخری مرکز پر بڑا حملہ، فیصلہ کن جنگ جاری

بین الاقوامی
2 مہینے پہلے
Image

دمشق: شام میں امریکی حمایت یافتہ فورس ’ایس ڈی ایف‘نے دولت اسلامیہ (داعش) کے آخری مرکز پر فیصلہ کن حملہ کردیا جس کے نتیجے میں وہاں گھمسان کی جنگ جاری ہے۔

’ایس ڈی ایف‘مختلف عسکری تنظیموں پر مشتمل اتحاد ہے جو شام میں داعش کے خلاف آپریشن کررہا ہے۔ ایس ڈی ایف کے ترجمان نے غیر ملکی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ مشرقی صوبہ دیر الزور میں انہیں داعش کے جنگجوؤں کی جانب سے سخت مزاحمت کا سامنا ہے، بظاہر یوں محسوس ہوتا ہے کہ داعش کے سب سے تجربہ کار جہادی اپنے اس آخری مرکز کا دفاع کررہے ہیں۔

Since the beginning of the evening, the Kurdish Led #SDF forces supported by #US and #France have launched the ultimate offensive against the last village held by the #ISIS in the South of the #Euphrates Valley in Al-#baghuz Fawqani ( الباغوز فوقاني ) @StrategicNews1 #Syria pic.twitter.com/x7DHvKPplC

— Botin Kurdistani (@kurdistannews24) February 10, 2019



دو سال قبل داعش کا شام و عراق کے وسیع و عریض رقبے پر قبضہ تھا۔ لیکن اس کے بعد امریکا کی زیر سربراہی مختلف ممالک کے اتحاد نے داعش کے خلاف آپریشن کیا جس کے نتیجے میں اب وہ دیر الزور میں عراقی سرحد کے قریب ایک چھوٹے سے قصبے باغوز تک محدود ہوکر رہ گئی ہے۔

اس علاقے سے شہریوں کو انخلا کے لیے ایک ہفتے کی مہلت دی گئی تھی جو گزشتہ روز ختم ہوگئی جس کے بعد باغوز پر حملہ کردیا گیا ہے۔

ایس ڈی ایف ترجمان مصطفیٰ بالی نے بتایا کہ باغوز میں خوفناک جھڑپیں ہورہی ہیں اور شاید وہاں داعش کے سب سے خطرناک جنگجو موجود ہیں جو اپنے آخری مرکز کا پوری طاقت سے دفاع کررہے ہیں۔

Absolutely stunning photos from #Baghuz and #Hajin Syria where the last remnants of ISIS tries to negotiate for a truck of food and safe passage to Idlib in exchange for captured SDF soldiers pic.twitter.com/WL3ZGUiiaj

— JT (@NigelBaron) February 7, 2019



ایس ڈی ایف نے حالیہ ماہ کے دوران امریکی اتحادی افواج کی بمباری کی مدد سے زمینی آپریشن کرتے ہوئے شمال مشرقی شام میں بہت سے گاؤں، دیہات اور قصبوں سے داعش کو نکال باہر کیا ہے۔

2014 میں اپنے دور عروج میں داعش نے شام و عراق میں خلافت قائم کی تھی جو رقبہ میں برطانیہ جتنی بڑی تھی اور اس کی آبادی 77 لاکھ تھی۔

قوات سوريا الديمقراطية تدك اخر المربع الصغير التي تسيطر عليه داعش في قرية باغوز الفوقاني..وبحسب باهوز دلوفان: اليوم ستبدأ قسد المعركة الفاصلة وتنتهي داعش.#سقطت_دولة_الخلافة pic.twitter.com/vR6CBWFuJf

— DÎYAR AHMO (@DIYAR10391454) February 9, 2019



واضح رہے کہ دسمبر میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے شام میں داعش کو شکست دینے کا اعلان کرتے ہوئے امریکی فوج واپس بلانے کا فیصلہ کیا ہے۔