آپ کیا کھاتے سے زیادہ آپ کب کھاتے ہیں اہم ہے

صحت
ایک ہفتہ پہلے
Image

وزن بڑھنے کا تعلق کھانے کی مقدار اور قسم کے ساتھ ساتھ  وقت کے تعین پر بھی ہے۔ فوٹو کریڈٹ : گیٹی امیجز گھر کے کچن میں بنے ہوئے کھانے اور گھر کے پیک کیے ہوئے لنچ باکس سے باہر ہر وقت دستیاب ان گنت ذائقوں کی الگ ہی دنیا ہے اور اس دنیا میں کھو کر اکثر لوگ اپنی صحت سے ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں۔سائنسدانوں کے مطابق نیند اور کھانے کے اوقات میں ادھر ادھر ہونے سے 'سرکاڈین ڈسرپشن' مسئلہ پیدا ہوجا تا ہے یعنی دن اور رات کا منتشر ہوجانا۔اس کا مطلب یہ ہے کہ دن اور رات کی تفریق کیے بغیر کھانے اور سونے سے وزن بڑھنے کے مسائل پیدا ہوجاتے ہیں۔کئی صدیوں سے وزن کا بڑھنا  ٹائپ 2 ذیابیطس اور دیگر بیماریوں  سے جوڑا جاتا رہا ہے لیکن لوگ ان بیماریوں کی وجہ کو بھول جاتے ہیں۔ ان بیماریوں کے پیچھے بھی کھانے کی مقدار اور قسم دونوں ہوتے ہیں۔ ہر طرح کا کھانا اور کسی بھی قسم کی ورزش کا نہ ہونا۔تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ  ان مسائل کے ساتھ ایک اور مسئلہ بھی ہے جو وزن بڑھا دیتا ہے، وہ ہے ٹائمنگ، جس کی بہت اہمیت ہوتی ہے۔آپ کیا کھاتے سے ہیں زیادہ آپ کب کھاتے ہیں یہ زیادہ اہم ہوتا ہے۔قدیم چینی طب کے مطابق سورج کے دن بھر کے سفر کے ساتھ ساتھ انسانی جسم کی توانائی بھی چلتی ہے۔اسی حرکت کے ساتھ کھانا کا معمول بھی طے ہونا چاہیے۔ صبح 9-7 بجے کا وقت معدے کے لیے ہوتا ہے، دوپہر کا کھانا 11-9 بجے کے درمیان پتے اور تلی کے لیے ہوتا ہے ، صبح 11 بجے سے دوپہر 1 بجے تک کا وقت دل کے لیے اور اسی طرح رات کا ہلکا پھلکا کھانا شام 5 بجے سے رات 7 بجے کے درمیان ہونا چاہیے یہ کھانا گردے کو فعال رکھنے میں مدد دیتا ہے۔جدید سائنس بھی اس قدیم طبی تصور کی تائید کرتی ہے۔ وزن کم کرنے کی منصوبہ بندی کے دوران تمام دھیان کھانے پر دیا جاتا ہے اور اس میں 'وقت' کا تصور بھلا دیتے ہیں۔یونیورسٹی آف سرے کے جوناتھن جونسٹن انسانی جسم کی گھڑی اور کھانے کے درمیان تعلق پر تحقیق کر رہے ہیں ان کا کہنا ہے کہ لوگ سمجھتے ہیں کہ رات کو دیر سے کھانے کی وجہ سے وزن بڑھ جاتا ہے کیونکہ سوتے وقت جسم کیلوریز کو استعمال کرنا چھوڑ دیتا ہے۔لیکن یہ درست نہیں ہے۔انسانی جسم ظاہری طور پر سو جاتا ہے لیکن اس کے اندر کا نظام اپنا کام جاری رکھتا ہے۔صبح کے وقت جسم کھانا ہضم کرنے پر زیادہ محنت کرتا ہے اس لیے اچھا اور بھاری ناشتہ کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔ تحقیق میں یہ بات واضح کر دی گئی ہے کہ دن اور رات کا تعلق ہمارے نظام ہاضمہ سے بھی ہے۔انسانی جسم کے اندر بھی ایک گھڑی لگی ہوئی ہوتی ہے جس کی سوئیوں کے مطابق جسم کے اندر کے تمام نظام اپنے وقت کے مطابق کام کرتے ہیں۔ نیند کی کمی اور بے وقت کھانا اس گھڑی کو آگے پیچھے کر دیتا ہے۔ اس گھڑی کی خرابی میں ایک بڑی وجہ نیند کی کمی یا بے وقت سونا بھی ہے۔یہی وجہ ہے کہ رات کی شفٹوں میں کام کرنے والے اور مسلسل بیرون ملک سفر کرنے والے لوگ رات اور دن میں فرق کی وجہ سے صحت کے حوالے سے مسائل کا شکار رہتے ہیں۔